مہرالنساء کا گھر

” پشپا “
April 26, 2021
رنگوں کے رنگ
May 3, 2021

مہرالنساء کا گھر

حسن منہاس

ہمارا اپنا کوئی بچہ نہیں ہے اور آپ کی طبیعت بھی ٹھیک نہیں رہتی- آپ یہ گھر میرے نام کردیں – ارے پگلی ذیشان ہمارا بیٹا ہی تو ہے – فیاض صاحب نے ہنستے ہوئے مہرالنسائ کو کہا-ذیشان کو آپ کے خاندان والے اپنا نہیں سمجھتے ہیں- ان کے لیے تو ذیشان لے پالک ہے – مہرالنسائ نے پریشانی کے عالم میں فیاض صاحب کو کہا- تم ایسے ہی پریشان ہو جاتی ہو- تمہارے ساتھ میرے سب بھائی بہت اچھے ہیں ان کے بچے بھی تو ہمارے بچے ہیں وہ ہمارا بہت خیال رکھیں گے- مہرالنسائ اپنے خاوند اور بیٹا جو مہرالنسائ نے اپنے بھائی سے لیا ہوا تھا کے ساتھ چھوٹے سے مگر خوبصورت گھر میں رہتی تھیں- مہرالنسائ نے گھر کو بہت خوبصورتی سے سجایا ہوا تھا لیکن مہرالنسائ اپنے خاوند کی طبیعت کی وجہ سے بہت پریشان رہتی تھی – وہ اپنے خاوند کا بہت خیال رکھتی تھی -ذیشان اب بڑا ہو چکا تھا اور اب وہ فیاض صاحب کی دکان کا کام سنبھالنا شروع ہوگیا تھا پھر اچانک مہرالنسائ بروہ قیامت ٹوٹ پڑی جس کا خوف اسکو اندر ہی اندر کھائے جا رہا تھا- فیاض صاحب اس جہان فانی کو چھوڑ کر جا چکے تھے-فیاض صاحب کی وفات کے چند ماہ بعد ہی فیاض صاحب کے بھائیوں نے مہرالنسائ سے گھر واپس لینے کے لیے رابطہ کیا -ان کا کہنا تھا چونکہ فیاض کی کوئی اپنی اولاد نہیں ہے اس لیے اس مکان پر ہمارا اور ہمارے بچوں کا حق ہے – لہذا مہرالنسائ تم اپنا حصہ لوں اور مکان ک خالی کرو- مہرالنساء کو وہ دن یاد آنے لگے جب وہ اپنے باپ کے گھر کو ہمیشہ کے لیے چھوڑ کر فیاض صاحب کے گھر آءتھی – اس نے فیاض صاحب کے گھر کو بڑے ارمانوں سے سجایا تھا – مہرالنسائ نے دن رات اپنے خاوند کی خدمت کی تھی-اور آج اس کو اپنے ہی گھر سے بے دخل کر دیا جانا تھا- مہرالنسائ جو اپنی جوانی میں اپنے ماں باپ کے گھر کو ہمیشہ کے لیے چھوڑ کر آئی تھی وہ پھر اسی چوکھٹ کی طرف دیکھ رہی تھی- مہرالنسائ نے آسمان کی طرف منہ کیا اور کہا دیکھئے فیاض صاحب آپ کے گھر والوں نے مجھے میرے ہی گھر سے نکال دیا-